عمران خان کو انسداد دہشت گردی کی عدالت سے ضمانت مل گئی

عمران خان کو انسداد دہشت گردی کی عدالت سے ضمانت مل گئی
عمران خان کو انسداد دہشت گردی کی عدالت سے ضمانت مل گئی

عمران خان کو انسداد دہشت گردی کی عدالت سے ضمانت مل گئی

کراچی (ویب ڈیسک) اسلام آباد کی انسداد دہشت گردی کی عدالت نے چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کی ضمانت منظور کر لی ، یکم ستمبر تک گرفتار نہ کرنے کا حکم ، ایک لاکھ کے ضمانتی مچلکوں کے عوض ضمانت دی گئی ۔عمران خان کی پیشی کے موقع پر فیڈرل جوڈیشل کمپلیکس کے اطراف سیل، عمران کی گاڑی بھی اندر نہیں جانے دی گئی ۔ پیدل چل کر عدالت پہنچے ، پیشی کے موقع پر عدالت کے باہر پی ٹی آئی کے کارکن بڑی تعداد میں موجود تھے ۔

چیئرمین تحریک انصاف کو یکم ستمبر تک گرفتار کرنے سے روک دیا گیا

عدالت نے یکم ستمبر تک چیئرمین تحریک انصاف کو گرفتار کرنے سے روک دیا ،تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان جمعرات کو انسداد دہشت گردی کی عدالت میں پیش ہونے جہاں ان کے خلاف خاتون جج کو دھمکانے کے الزام میں دہشت گردی کا مقدمہ درج ہے۔عمران خان کے وکیل بابر اعوان نے عدالت میں دلائل دیتے ہوئے کہا کہ ایف آئی آر میں مجسٹریٹ شکایت کنندہ ہے،پراسیکیوشن کے مطابق آئی جی اسلام آباد ،ایڈیشنل آئی جی اور خاتون جج کو دھمکایا گیا یہ تینوں شکایت کنندہ نہیں ہیں ،

شرم کرو کے الفاظ دھمکی نہیں ،ایکشن سے مراد قانونی ایکشن تھا ،بابراعوان کے دلائل

بابر اعوان نے مزید کہا کہ “شرم کرو” کے الفاظ دھمکی نہیں ہیں عمران نے جج کو مخاطب کرکے کہا تھا ہم تمہارے خلاف ایکشن لیں گے اسلام ہائی کورٹ سے رجوع کرکے وہ ایکشن ہم نے لیا ۔

دفعہ 144 کی خلاف ورزی کے مقدمے میں بھی عمران خان کی ضمانت منظور

عدالت نے دلائل سننے کے بعد ایک لاکھ ضمانتی مچلکوں کے عوض عمران خان کی ضمانت منظور کر لی ،پولیس کو یکم ستمبر تک عمران خان کو گرفتار کرنے سے روک دیا گیا ۔

دریں اثنا دفعہ 144 کی خلاف ورزی کے ایک اور مقدمے میں بھی عمران خان کو ضمانت مل گئی ،ایڈیشنل سیشن جج طاہر عباس نے 7 ستمبر تک چیئرمین تحریک انصاف کی ضمانت منظور کر لی اور انہیں پانچ ہزار روپے مچلکے جمع کرنے کا حکم دیا ۔

Be the first to comment

Leave a Reply