کراچی میں بلدیاتی انتخابات پھر ملتوی ہونے کا خطرہ

کراچی میں بلدیاتی انتخابات پھر ملتوی ہونے کا امامکان
کراچی میں بلدیاتی انتخابات

کراچی میں بلدیاتی انتخابات پھر ملتوی ہونے کا خطرہ

کراچی (ویب ڈیسک) سندھ حکومت نے الیکشن کمیشن آف پاکستان سے کراچی اور حیدر آباد کے بلدیاتی الیکشن ملتوی کرنے کی درخواست کر دی، میڈیا ذرائع کے مطابق یہ درخواست سندھ میں مون سون کے نئے اسپیل کی آمد کی وجہ سے کی گئی ہے ۔

بارشوں کے پیش نظر سندھ حکومت کی الیکشن کمیشن سے درخواست

حکومت نے موقف اختیار کیا ہے کہ محکمہ موسمیات نے رواں ہفتے مزید بارشوں کی پیش گوئی کی ہے ، کراچی اور حیدر آباد ڈویژن میں پہلے سے بارشوں کی وجہ سے ریلیف کے کام چل رہے ہیں ایسے میں 28 اگست کو انتخابات کا انعقاد ممکن نہیں ہوگا ۔اس سے قبل کراچی اور حیدر آباد کے ضلعی افسران نے صوبائی حکومت کو تجویز دی تھی کہ حالیہ صورت حال کے پیش نظر انتخابات کو مؤخر کیا جائے ۔

جماعت اسلامی کا التواء کے فیصلے کی مزاحمت کرنے اعلان

دریں اثنا جماعت اسلامی کراچی کے امیر حافظ نعیم الرحمن نے انتخابات کے التواء کو مسترد کردیا ہے ، کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے انہوں نے دھمکی دی کہ جماعت اسلامی التواء کے فیصلے کی مزاحمت کرے گی ۔

سندھ حکومت کراچی کو میئر سے محروم کرنے کے بہانے ڈھونڈ رہی ہے ،حافظ نعیم الرحمن

حافظ نعیم الرحمن کا کہنا ہے کہ حیدر آباد اور بدین میں بلدیاتی انتخابات کا ملتوی ہونا قابل فہم ہے کہ ان کو آفت زدہ قرار دیا گیا ہے اور وہاں صورت حال واقعی خراب ہے، کراچی میں ایسی صورت حال نہیں ہے ، بارش کے بہانے الیکشن کا التواء قابل قبول نہیں ، انہوں نے کہا کہ سندھ حکومت پہلے بھی دوسال سے بلدیاتی انتخابات ملتوی کراتی رہی ہے ، انہوں نے دعویٰ کیا کہ سندھ حکومت کراچی کو میئر سے محروم کرنے کے لئے بہانے تراش رہی ہے ۔

سیلاب متاثرین ، مذہبی تنظیمیں اور دینی شخصیات

1 Trackback / Pingback

  1. سندھ کے تعلیمی ادارے دو دن کے لیے بند رہیں گے

Leave a Reply