یہ بزرگوں کی نشانی

ملی نغمہ از لطیف الرحمن لطف : یہ بزرگوں کی نشانی
یہ بزرگوں کی نشانی عظمتوں کی یہ کہانی اپنے خوں سے ہم کریں گے اس وطن کی پاسبانی

یہ بزرگوں کی نشانی
عظمتوں کی یہ کہانی
اپنے خوں سے ہم کریں گے
اس وطن کی پاسبانی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اس کی مٹی محترم ہے
بالقیں رشک ارم ہے
یہ خدا کا اک کرم ہے
یہ ہے ان کی مہربانی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اس سے نسبت کیا ہماری
یہ ہے گویا ماں ہماری
کٹ مریں گے اس کی خاطر
جان ہے تو آنی جانی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سب نے اک نعرہ سنا تھا
میرے قائد کی زبانی
تیرا آئیں ہوگا قرآں
ہوگا دستور آسمانی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رب نے تجھ کو سب ہے بخشا
کھیت زرخیز اور صحرا
اور کئے سینے پہ رقصاں
میٹھے دریا، گرم پانی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تیرے نغمے کیا لکھوں میں
خون سے مصرع لکھوں میں
پھر بھی نہ ہو پائے گی لطف
میرے دل کی ترجمانی
یہ بزرگوں کی نشانی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شاعر: لطیف الرحمن لطف

وطن کی محبت عقل و شرع کی روشنی میں
اقرأ روضۃ الاطفال ماڈل اسکول

Be the first to comment

Leave a Reply