عید قربان کا پیغام

عید قربان کا پیغام
عید قربان یا عید الاضحی کے احکامات

ضیاء چترالی

دنیا کے تقریباً تمام مذاہب و ادیان میں خوشی منانے کیلئے تہوار کے کچھ ایام مقرر ہیں۔ اسلام چونکہ ایک کامل و مکمل دین اور انسانی فطرت کے عین مطابق ضابطۂ حیات ہے، اس لئے اس نے بھی اپنے ماننے والوں کو خوشی منانے کے لئے سال میں دو دن عید الاضحی اور عید الفطر کی صورت میں دیئے ہیں۔

جب نبی کریمؐ مکہ مکرمہ سے ہجرت کر کے مدینہ منورہ تشریف لائے تو وہاں زمانہ جاہلیت سے تہوار منانے کا سلسلہ جاری تھا، جس میں وہ لہو و لعب میں مبتلا ہوتے تھے۔ تو آپ نے اس کے مقابلے میں اپنی امت کو بھی خوشی منانے کے دو دن دیدیئے۔

دو عید دو ارکان اسلام

خوشی کے یہ دونوں ایام اسلام کے دو بڑے ارکان کے ساتھ جڑے ہوئے ہیں۔ اور ان ارکان کی ادائی کے بعد خوشی کے طور پر مسلمان یہ دن مناتے ہیں۔ عید الاضحی حج کی ادائی اور عید الفطر میں رمضان المبارک کے روزوں کی تکمیل کے بعد منائی جاتی ہے۔

روزہ اور حج جیسی عظیم عبادات کے باعث عیدین کے ایام کی فضیلت بھی عام دنوں سے بہت بڑھ جاتی ہے۔ مگر عید الاضحی کے ساتھ قربانی کا مبارک عمل بھی جڑا ہوا ہے، اس لئے اسے عید قرباں بھی کہا جاتا ہے۔ عید الفطر سے عید الاضحی کی اہمیت زیادہ ہونے کی وجہ سے اسے بڑی عید بھی کہتے ہیں۔

قربانی کی تاریخ

قربانی کی تاریخ اتنی ہی پرانی ہے، جتنی خود انسان کی۔ تاریخ میں پہلی قربانی سیدنا آدم علیہ السلام کے دو بیٹوں ہابیل اور قابیل نے پیش کی تھی۔ قابیل کی قربانی مسترد اور ہابیل کی بارگاہ الٰہی میں قبول ہوئی۔ پھر مسلمان جو قربانی کرتے ہیں۔ یہ عمل حق تعالیٰ سے سچی محبت کرنے والے حضرت ابراہیم اور ان کے بیٹے حضرت اسماعیل علیہما السلام کی تاریخی قربانی کی یادگار ہے۔

قربانی کا مقصد اصلی

جب حضرت ابراہیم علیہ السلام کو بیٹے کی قربانی کا حکم دیا گیا۔ تو انہوں نے لخت جگر سے اس بابت مشورہ کیا۔ تو فرمانبردار بیٹا فوراً ہی راہ حق میں قربان ہونے کو تیار ہو گیا۔ یہ دراصل ابراہیم علیہ السلام کا کڑا امتحان تھا، جس میں وہ شیطان کی ہزار کوشش کے باوجود کامیاب ہوگئے۔

انہوں نے بیٹے کو ذبح کرنے کےلئے لٹایا۔ مگر اسماعیل ؑ کے بجائے جنت کا مینڈھا ان کے ہاتھوں قربان ہو گیا۔ اس کے بعد رب تعالیٰ نے انہیں اپنا خلیل (گہرا دوست) بنانے کا اعلان کیا۔ یہ منظر چشم فلک نے پہلی بار دیکھا تھا کہ ایک شفیق بوڑھا باپ اپنے ہاتھوں نوخیز لخت جگر کو رب کی رضا کیلئے قربان کر رہا تھا۔ اور بیٹا بھی اپنے پروردگار کے نام پر کٹنے کیلئے گردن پیش کر رہا تھا۔

باپ بیٹے کا یہ جذبہ و ایثار حق تعالیٰ کو اتنا پسند آیا، کہ رہتی دنیا تک حضرت ابراہیم علیہ السلام کی اس یادگار کو زندہ رکھا۔ اب جانور ذبح کرنے کا مقصد اور اصل روح ہی تقویٰ، اطاعت و فرمانبرداری اور رب تعالیٰ کی رضا کا حصول ہے۔

اللہ کے لئے سب کچھ قربان کرنے کا جذبہ

قربانی کا دوسرا اہم مقصد یہ ہے۔ کہ حضرت ابراہیم ؑ کے اسوہ پر عمل کرتے ہوئے اپنا سب کچھ خدا کیلئے قربان کرنے کا جذبہ پیدا کرنا ہے۔ اگر خدا نخواستہ یہ مقصد ہی نہ ہو یا کسی کوتاہی کی وجہ سے یہ حاصل نہ ہو سکے۔ تو ہماری قربانی حق تعالیٰ کے نزدیک رائیگاں ہے۔ اس لئے کہ ”خدا کو نہ ان جانوروں کا گوشت پہنچتا ہے اور نہ ان کا خون۔ اسے تو صرف تمہارا تقویٰ پہنچتا ہے۔“ (سورة الحج: 22)

قرآن کریم کی سورة المائدہ میں ہابیل اور قابیل کی قربانیوں کا ذکر ہے۔ اس میں یہی الفاظ آئے ہیں۔ کہ ”خدا صرف متقی لوگوں کی قربانی قبول فرماتا ہے۔“ مقبول قربانی کے بڑے فضائل احادیث مبارکہ میں بیان ہوئے ہیں۔ عید الاضحی کے روز جانور کا خون بہانے سے زیادہ کوئی عمل حق تعالیٰ کو پسندیدہ نہیں ہے۔

قربانی کے جانور کو حق تعالیٰ نے اپنے شعائر میں سے قرار دیا ہے۔ روز قیامت یہ جانور اپنے تمام اعضاءکے ساتھ لایا جائے گا۔ اور میزان عمل میں اسے نیکیوں کے پلڑے میں رکھ کر تولا جائے گا۔ جبکہ جانور کے ایک ایک بال کے بدلے میں قربانی کرنے والے کو نیکی ملتی ہے۔

قربانی میں ریا کاری کا بڑھتا رجحان

صد افسوس! کہ ہمارے یہاں قربانی تو تقریباً سبھی کرتے ہیں۔ مگر اس کی اصل کو پامال کرنے کا بھرپور اہتمام کیا جاتا ہے۔ نیکی چاہے کتنی بڑی ہو، مگر ریاکاری سے وہ کالعدم ہو کر رہ جاتی ہے۔ بلکہ پیسہ خرچ کرنے کے باوجود وہ عمل نیکی کے بجائے گناہ کے زمرے میں لکھا جاتا ہے، جس کا انجام بہت برا ہے۔

مسلم شریف کی حدیث میں ہے: روز قیامت سب سے پہلے تین ریاکار افراد کو جہنم میں ڈالا جائے گا، حالانکہ ان کا نیک عمل بہت بڑا ہو گا۔ ایک شخص تو وہ ہے جو میدان جہاد میں اپنی جان تک کا نذرانہ پیش کرتا ہے۔ دوسرا ساری زندگی علم دین پڑھنے پڑھانے والا اور تیسرا صبح و شام اپنا مال صدقہ و خیرات کرنے والا۔ مگر چونکہ ان کا عمل لوگوں کو دکھانے کیلئے ہوتا ہے، اس لئے انہیں جنت تو کیا ملتی، وہ سب سے پہلے جہنم میں جھونک دیئے جائیں گے۔

قربانی جیسی عظیم عبادت کے سلسلے میں بھی عوام کا مجموعی طرز عمل ریاکاری کا مظہر بنا ہوا ہے۔ جانوروں کے حوالے سے دیکھا جائے تو گویا مقابلے کی فضا بنی ہوئی ہے۔ ایک دوسرے کو نیچا دکھانے کےلئے مہنگے سے مہنگا جانور خریدنا ایک فیشن بن چکا ہے۔ بچے تو ایک طرف، پختہ عمر کے افراد بھی اپنی شان و شوکت کو ظاہر کرنے کیلئے قربانی کے جانوروں کو لےکر لوگوں کو ان کی قیمت بتاتے پھرتے ہیں۔

بعض جگہ قناتیں لگا کر گلیوں میں ہی جانوروں کو نمائش کی غرض سے باندھ دیا جاتا ہے۔ جانور کی حفاظت کے نام پر مسلح گارڈز کی خدمات بھی فخریہ انداز میں حاصل کی جاتی ہیں۔ مختلف اہم شاہراہوں سے متصل ہیوی قسم کے جانوروں کے اسٹال لگا کر ان کی نمائش کا بطور خاص اہتمام کیا جا رہا ہے۔ پھر شہرت کے بھوکوں کی جانب سے مہنگے جانور کی تشہیر کےلئے باقاعدہ میڈیا کی ٹیم بھی بلانے کا رواج چل نکلا ہے۔ اور اس نمود و نمائش کی تشہیر کیلئے ابلاغی ادارے بھی ایک دوسرے سے آگے نکلنے کی دوڑ میں لگے ہوئے ہیں۔

سوشل میڈیا پر قربانی کے جانوروں کی تشہیر کا افسوس ناک پہلو

اب سوشل میڈیا تک ہر کس و ناکس کی رسائی نے بقیہ کسر بھی پوری کر دی ہے۔عید قربان پر فیس بک وغیرہ کے صارفین نے قربانی کے جانوروں کی تشہیر کو گویا واجب سمجھ رکھا ہے۔ جس کا اندازہ بڑے پیمانے پر شیئر ہونے والی اس طنزیہ پوسٹ سے کیا جا سکتا ہے، جس میں کسی نے مفتی سے سوال کیا ہے کہ میں نے قربانی کا جانور تو خریدا ہے، مگر کسی وجہ سے اس کی تصویر سوشل میڈیا میں اَپ لوڈ نہ کر سکا، کیا میری قربانی ہو جائے گی؟

ہم قربانی کے جانور کی رسی تو بچوں کو تھما دیتے ہیں، مگر ہم میں سے کتنے ایسے ہوں گے، جو جس شخصیت کی قربانی یادگار ہے، اس کا ذکر اپنے بچوں کے سامنے کرتے انہیں قربانی کا فلسفہ سمجھانے کی کوشش کرتے ہیں؟

عید قربان میں خرافات کی آمیزش

قربانی کے علاوہ دیگر حوالوں سے بھی ہم مذہبی تہوار اس طرح منانے لگے ہیں۔ جس سے ہم اور دیگر مذاہب کے پیروکاروں میں کوئی فرق نہیں باقی رہتا۔ وہی لہو لعب، وہی رقص و سرود، گانے اور دیگر خرافات نے عیدین کی اصل کو مجروح کر کے رکھ دیا ہے۔ امیر المومنین حضرت عمر فاروقؓ کا عید کے دن یہ معمول ہوتا تھا کہ آپؓ زار و قطار روتے۔

پوچھا جاتا کہ آپ اس قدر کیوں رو رہے ہیں؟ آج تو عید ہے، خوشی منانے کا دن ہے۔ امیر المومنینؓ فرماتے: یہ خوشی کا دن ہے اور خوف کا دن بھی۔ خوشی اس کےلئے ہے، جس کی عبادت قبول ہوئی اور جس سے رب راضی ہوا، لیکن جس کی نہ عبادت قبول ہوئی اور نہ خدا راضی ہوا تو اس کےلئے یہ عید خدا سے ڈرنے کا دن ہے۔

اور میں یہ نہیں جانتا ہوں کہ میں مقبولوں میں سے ہوں یا غیر مقبولوں میں سے۔ اسی لئے رو رہا ہوں کہ نہ جانے حق تعالیٰ آخرت میں میرے ساتھ کیا سلوک فرمائے۔ فاروق اعظمؓ کا یہ سنہرا فرمان ہی عید کا اصل پیغام ہے۔

عید اور خوشی منانے کا اسلامی تصور

1 Trackback / Pingback

  1. حجاج کی قربانی کا گوشت کہاں جاتا ہے؟ - EduTarbiyah.com

Leave a Reply